Tishna dehan ko piyaas ki shid’dat na maar dy

Tishna dehan ko piyaas ki shid’dat na maar dy
Aay shakhs! Mujh ko teri zarurat na maar dy

Hota hai jis tarha sy makafat ka amal
Tujh ko hamary baad mohab’bat na maar dy

Tu beech mai naa aa ye tera mas’ala nahi
Teri ye guftagu meri him’mat na maar dy

Jalny do unko aur unhy dekhty raho
In munkiro’n ko bughaz e wilayat na maar dy

Asa na ho k ham na milai’n umar bhar khai’n
Phir soch lo, khai’n hamy furqat na maar dy

Phir yu hua k waqt ka kasa ulat gia
Ham dar gay, khai’n hamy usrat na maar dy

Kehty han log sab ka hota hai meetha phal
Tehro, ruko, suno, tmhy ujlat na maar dy

Bs is liay mai tery brabar na aa ska
Mai sochta tha mujh ko ye shoh’rat na maar dy

Jata zarur toor py mai dekhny usy
Phir dar gia khai mujhy hairat na maar dy

Har shakhs apna hota nahi john jaan ly
Tujh ko khai’n laihaz o mura’wat na maar dy

تشنہ دہن کو پیاس کی شدت نہ مار دے
اے شخص! مجھ کو تیری ضرورت نہ مار دے

ہوتا ہے جس طرح سے مکافات کا عمل
تجھ کو ہمارے بعد محبت نہ مار دے

تو بیچ میں نہ آ یہ ترا مسئلہ نہیں
تیری یہ گفتگو مری ہمت نہ مار دے

جلنے دو اُن کو اور اُنھیں دیکھتے رہو
ان منکروں کو بغضِ ولایت نہ مار دے

ایسا نہ ہو کہ ہم نہ ملیں عمر بھر کہیں
پھر سوچ لو، کہیں ہمیں فرقت نہ مار دے

پھر یوں ہوا کہ وقت کا کاسہ الٹ گیا
ہم ڈر گئے کہیں ہمیں عُسرت نہ مار دے

کہتے ہیں لوگ صبر کا ہوتا ہے میٹھا پھل
ٹھہرو، رکو، سنو، تمہیں عجلت نہ مار دے

بس اس لیے میں تیرے برابر نہ آ سکا
میں سوچتا تھا مجھ کو یہ شہرت نہ مار دے

جاتا ضرور طور پہ میں دیکھنے اسے
پھر ڈر گیا کہیں مجھے حیرت نہ مار دے

ہر شخص اپنا ہوتا نہیں جون جان لے
تجھ کو کہیں لحاظ و مروت نہ مار دے

جون کاظمی…

Read More